گندی مچھلی اورتالاب (عامر محمود بٹ)

میں نے بچپن سے لیکر اب تک یہ محاورہ سینکڑوں بار سنا کہ ایک گندی مچھلی پورے تالاب کو گندہ کردیتی ہے مگر اس محاورے کی اصل حقیقت پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی کی صورتحال دیکھ کر بخوبی سمجھی جا سکتی ہے۔ پچھلے کافی دنوں سے پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی کو دیکھ رہا ہوں اور حالات کا وقفہ وقفہ سے جائزہ بھی لے رہا ہوں سابق ڈی جی راﺅ اسلم کے تبادلے کی وجہ بھی ایک گمنام لیٹر بتائی جا تی ہے جن میں ان پر بے شمار کرپشن کے الزامات تھے کہنے والے یہ بھی کہتے ہیں کہ یہ تحریر بلیک میلنگ کیلئے لکھی اور شیئر کی گئی ،ان کے جانے کے بعد کیا یہ کرپشن ختم ہوگئی ،،،نہیں بلکہ چیئرمین پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی کو بھی وہ کرپشن نمایاں طور پر دکھائی دینے لگی اور پھر انہوں نے ایک ویڈیو کانفرنس میں برملا 150سے زائد ملازمین کو کرپٹ قرار دیتے ہوئے ان کو حتمی وارننگ دیدی اور ہیڈ کوارٹر میں تعینات مختلف ذمہ داریوں کو سنبھالے جہاں اے ڈی ایل آرز کے تبادلے بھی کر دیئے گئے وہاں HR کا چارج سنبھالے علی سعید کو بھی محکمہ بدر کر دیا گیا اس کے بعد پھر اور گمنام لیٹر واٹس ایپ گروپوں میں وائرل کر دیا گیا جس میں پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی کے شعبہ فنانس کوسب سے زیادہ ٹارگٹ کیا گیا اورباقی تمام افسران پر بھی کرپشن کے الزامات لگاتے ہوئے انہیں کرپٹ ظاہر کر دیا گیا اور یہ تحریر بھی بلیک میلنگ اور افسران کی کردار کشی کی ایک خاص منظم سازش تھی۔ بات یہاں پر ختم نہ ہوئی تھی کہ پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی کے ہیڈ کوارٹر میں موجودہ خواتین اور مرد حضرات افسران کو مکمل طور پر ٹارگٹ بناتے ہوئے پے در پے کرپشن ، اختیارات کے ناجائز استعمال اور حراسمنٹ کے الزام لگا دیئے گئے۔چیئرمین پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی سردار احمد علی دریشک کے خلاف بھی محکمہ کی یونین کی جانب سے ہراساں کیے جانے اور دھمکیاں دیئے جانے کے حوالے سے کھلے خط لکھ دیئے گئے اور الزامات کی توپوں کی یہ گولہ باری ہے کہ رکنے کا نام ہی نہیں لے رہی اب سابق ایڈیشنل ڈی جی عائشہ حمید کے اوپر بھی الزام عائد کرتے ہوئے ان کی کردار کشی کا سلسلہ جاری کر رکھا ہے۔ اس سارے معاملے میں کتنی صداقت ہے یہ تو آنیوالا وقت ہی بتائے گا خدشہ ہے کہ پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی کے موجودہ ڈی جی پر بھی آئندہ دنوں میں کوئی الزام نہ لگ جائے اور ان کو بدنام کرنے کیلئے بھی کوئی تحریری مراسلہ نہ شروع ہوجائے کیونکہ انہوں نے بڑی ہمت کرکے ایک پریس ریلیز جاری کی ہے جس میں پندر ہ انکوائریوں کا ذکر کیا گیا ہے اور اشارہ دے دیا گیا ہے کہ جن کے خلاف شکایات ہیں ان کے خلاف اب قانون حرکت میں آئے گا ایک خاص بات کی طرف بھی توجہ دلانا چاہتا ہوں کہ پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی کے تمام افسران کی کردار کشی کا سکرپٹ رائٹر ایک ہی ہے لہٰذا اس کا کام صرف یہی ہے کہ وہ ہر اس شخص کے خلاف پروپیگنڈہ سازش اور بلیک میلنگ کے مخصوص ہتھکنڈے استعمال کر رہا ہے جو کہ اس کی فطرت میں شامل ہے اور پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی جسے تالاب کو بھی گندا کرنے میں اہم کردار ادا کر رہا ہے جو بات اب سب کی سمجھ میں آ چکی ہے۔دوسری جانب اس سرد جنگ کی بڑھتی ہوئی رفتار سے ایمانداری سے کام کرنے والے ملازمین کی ایک خاص تعداد بھی پریشان حال نظر آئی ہے جو نہیں چاہتی تھی کہ جس ادارے سے ان کے گھر والوں کو رزق مل رہا ہے وہ اس کے وقار پر آنچ آنے دیں مگر اب بچھتاوے کیا ہوت جب چڑیان چگ گئی کھیت میں اس تحریر میں مختصر خلاصہ بیان کررہا ہوں آنیوالے دنوں میں بڑے بڑے فیصلے کیے جائیں گے ہیڈ آفس میں بڑی بڑی سیٹوں پر براجمان لوگ اس ادارے کو یا توخیر آباد کہہ دیں گے یا ان کے متبادل افسران لائے جائیں گے اراضی ریکارڈ سنٹر میں کرپشن کے گڑھ کو جڑ سے نکالنے کی کوشش تیز کر دی جائے گی پانی کے اس تالاب کو گندی مچھلیوں سے بھی پاک کرنے کیلئے اقدامات اٹھائیں جائیں گے اور اگر ایسا نہ ہوا تویقین جانیے نہ تو یہ ڈی جی صاحب مزید بدنامی برداشت کرپائیں گے اورنہ حوصلہ منداور با ہمت چیئرمین اس ادارے کی فلاح کے لیے کچھ کر پائیں گے پھر اس اتھارٹی میں صرف لاقانونیت اور گندی مچھلیوں کا راج ہوگا، کاش کہ کیپٹن ظفر اقبال جیسے ایک دو افسر پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی میں دوبارہ آجائیں تو یقین مانیئے تالاب کو گندا کرنے والی تمام مچھلیان یا تودم دبا کر بھاگ جائیں گی یا پھر ایسی مثال بنا دی جائیں گی کہ دوبارہ اس تالاب میں گندی مچھلی کی کبھی بھی افزائش نہ ہو سکے گی۔ میری چیرمین پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی سے گذارش ھے کہ جن افسران پر مشتمل بورڈ قائم ھوا ھے ±اس میں کپٹن ظفر اقبال کو بھی لازم شامل کیا جائے ۔اللہ تعالیٰ ہم سب کا حامی و ناصر ہو اور اس مشکل وقت میں موجودہ انتظامیہ کوبہتر اقدامات اور لائحہ عمل بنانے کی توفیق عطا فرمائے (آمین)

یہ بھی پڑھیں

وزیراعظم سے آرمی چیف کی ملاقات، مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر بات چیت

اسلام آباد (میڈیا92نیوز آن لائن) وزیراعظم عمران خان سے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ …